Ehsass Koi Bukha Na Soya Program in Urdu. No One Sleep Hungary.


Prime Minister Imran Khan Launched "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program".  Initially "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program",  Launched in Rawalpindi and Islamabad, Later on Program will be lunche in all over the Country. "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program", is a good initiative of PTI Government for Poor and needy People. Read all details of "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program" in Urdu.
Ehsass Koi Bukha Na Soya Program in Urdu.


Prime Minister Imran Khan Launched "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program".

Initially "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program",  Launched in Rawalpindi and Islamabad, Later on Program will be lunche in all over the Country. "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program", is a good initiative of PTI Government for Poor and needy People. Read all details of "Ehsass Koi Bukha Na Soya Program, Ehsass No one Sleep Hungary Program" in Urdu.


Ehsass Koi Bukha Na Soya Program in Urdu. No One Sleep Hungary

 وزیر اعظم عمران خان نے غریبوں کو کھانا کھلانے کے لئے  کآغاز 

اسلام آباد - وزیر اعظم عمران خان نے بدھ کے روز یہاں منعقدہ ایک تقریب میں باضابطہ طور پر ‘احسا س کوئ بھکا نہ سوئے کا آغاز کیا۔

لانچنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے اس پر افسوس کا اظہار کیا کہ پاکستان میں بہت سے علاقے ایسے ہیں جہاں لوگ بھوکے سوتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا ، "پاکستان میں زیادہ تر لوگ روزانہ اجرت پر ہیں اور جب انہیں مزدوری نہیں ملتی ہے تو انہیں خالی پیٹ سونا پڑتا ہے۔"

انہوں نے کہا کہ حکومت اس وقت اسلام آباد میں پروگرام شروع کررہی ہے لیکن جلد ہی یہ دوسرے شہروں میں بھی پہنچ جائے گا۔ "ایک دن ، یہ وین پورے پاکستان میں لوگوں کو کھانا کھلائیں گی۔"

پروگرام کے مطابق ، موبائل ٹرکوں کے ذریعہ پکی کھانا مقررہ ڈلیوری پوائنٹس پر فراہم کیا جائے گا جو خاص طور پر ضرورت مند افراد کو بھوک کا خطرہ لاحق ہیں۔

ابتدائی طور پر ، احسان فوڈ ٹرک اسلام آباد اور راولپنڈی میں چلائے جارہے ہیں اور بعد میں اس پروگرام کو ملک کے دوسرے حصوں میں بھی بڑھایا جائے گا۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ یہ پروگرام ایک فلاحی ریاست کی طرف ایک قدم ہے ، جو ہمیشہ اپنے غریب اور مستحق لوگوں کی دیکھ بھال کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ یہ دیکھ کر ہمیشہ خوشی محسوس کرتے ہیں کہ ملک بھر میں قائم مختلف پنہاہوں میں مستحق افراد کو عزت اور وقار کے ساتھ پناہ اور کھانا دیا جاتا ہے۔

انہوں نے رواں سال جون تک سبسڈی پروگرام شروع کرنے کا بھی اعلان کیا جس کے تحت 30 ملین خاندانوں کے اکاؤنٹ میں براہ راست رقم منتقل کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ اس سے غریب اور مستحق افراد باورچی خانے کی اشیاء خرید سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان کا خواب تھا کہ انہوں نے ’کوئ بھی بھوکھا نہ سوئے‘ پروگرام کو پورے ملک تک بڑھانا اور انشاءاللہ ہم یہ کام کریں گے۔

عمران خان نے کہا کہ ملک میں مخیر حضرات کی ایک بڑی تعداد ایسے پروگراموں میں شرکت کی خواہش رکھتی ہے ، اور انھیں یقین ہے کہ جڑواں شہروں میں پائلٹ پروجیکٹ کی کامیابی سے ان کا اعتماد جیتنے میں مدد ملے گی جو پورے پاکستان میں اس کی توسیع کے لئے اپنا کردار ادا کرسکیں گے۔

انہوں نے فخر کے ساتھ پنجاب ، خیبر پختونخواہ اور گلگت بلتستان میں حکومت کی ہیلتھ کارڈ اسکیم کا بھی ذکر کیا ، جس کے تحت ہر خاندان کو کسی بھی سرکاری یا نجی اسپتال سے دس لاکھ روپے کے طبی علاج کے حقدار قرار دیا گیا ہے۔

وزیر اعظم کو اس موقع پر بریفنگ میں بتایا گیا کہ مختلف مقامات پر وسیع تر بات چیت کے بعد ، پاکستان بیت المال (PBM) نے Panahgaahs کے توسیع کے مطالبات سے نمٹنے کے لئے میل پر پہیے پروگرام شروع کیا۔

وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے سماجی تحفظ ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے کہا کہ اس پروگرام کا مقصد اسلام آباد کے شہری اور دیہی علاقوں میں دو وقت کے حفظان صحت سے بھرے کھانا - دوپہر کے کھانے اور رات کے کھانے کی سہولت فراہم کرنا ہے۔ اس منصوبے کو بعد میں ملک کے دیگر علاقوں تک بڑھایا جائے گا۔

پی بی ایم کے منیجنگ ڈائرکٹر عون عباس نے اپنی بریفنگ میں کہا کہ اس وقت راولپنڈی اور اسلام آباد کے جڑواں شہروں کے مختلف مقامات پر ہسپتالوں ، بس اسٹیشنوں اور دیگر عوامی مقامات پر انتہائی عزت کے ساتھ ایہاساس فوڈ ٹرک مفت کوالٹی پکا کھانا مہیا کررہے ہیں۔ کھانا ٹرک کچن سے پکایا ، ذخیرہ کیا گیا اور تقسیم کیا گیا۔

تخمینے کے مطابق ، ہر کھانے کا ٹرک روزانہ تقریبا 2،000 دو ہزار افراد کو دو وقت کا کھانا کھلا دیتا تھا ، اور ان لوگوں کو نشانہ بناتا تھا ، جو کھانا کے ل Pan پناہ گاہوں تک نہیں پہنچ سکتے تھے۔

یہ پروگرام پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ موڈ میں تیار کیا گیا ہے جس کے تحت پی بی ایم فوڈ ٹرکوں کے کاموں کی ذمہ داری قبول کرے گی اور کھانے کی فراہمی کے لئے سیلانی ویلفیئر انٹرنیشنل ٹرسٹ ذمہ دار ہوگا۔

پاکستان بیت المال پہلے ہی انتہائی غریب اور نادار افراد کو کھانا اور رہائش فراہم کرنے کے لئے پنہاہوں کے اجزاء پر کام کر رہا ہے۔ اب تک اس نے مختلف صوبوں میں 15 پناہ گاہیں قائم کی ہیں۔

‘احسان کوئی بھکا نہ سوئے’ کو معاشی طور پر مزید مستحکم بنانے کے لئے ، غربت کے خاتمے اور سوشل سیفٹی ڈویژن نے ایک "ڈونر کوآرڈینیشن گروپ" تشکیل دیا تھا جو نجی شعبے سے وابستہ ہونے کے لئے احسان چینل کا کام کرے گا۔ رابطہ گروپ کے ذریعہ نجی شعبے ، بین الاقوامی ایجنسیوں ، مخیر حضرات ، سول سوسائٹی اور افراد کے وعدوں اور وعدوں کی نگرانی کی جائے گی۔

یہ اقدام ملک میں بھوک کے خاتمے کے لئے وفاقی حکومت کا ایک نیا پالیسی اقدام تھا۔ یہ احسان لنگر پالیسی کا ایک توسیع تھی ، جس کا مقصد ضرورت مند لوگوں میں ، خاص طور پر ان لوگوں کو جو بھوک کے خطرہ میں مبتلا افراد کو مقررہ ڈلیوری پوائنٹس پر پکا ہوا کھانا تقسیم کرنا تھا۔

وزیر اعظم عمران خان نے بدھ کے روز کہا ہے کہ بے گھر افراد کو اپنے مکانات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔

ہاؤسنگ ، تعمیر و ترقی کے لئے قومی رابطہ کمیٹی کے ہفتہ وار اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے ، وزیر اعظم نے کہا کہ لوگوں کو مکانات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیح ہے اور یہ ہر غریب اور کم آمدنی والے فرد کا حق ہے۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ رہائش اور تعمیراتی شعبے کے منظور شدہ اور زیر غور منصوبوں سے 2.07 کھرب روپے کی اقتصادی سرگرمی ہوگی۔